جب اس پر نظر میری پہلی بار پڑی تھی

زندگی کے لمحوں میں اک حسین گھڑی تھی

یوں روح سے روح کا ربط قائم ہوا تھا

دل اس کے پاس، جان مرے پاس پڑی تھی

بات اس سے جب پہلی بار ہوئی میری

نظر اس کے ہاتھ کی چوڑی پہ پڑی تھی

جب اس نے پہلی بار میرا نام لیا تھا

کانوں کو سب سے اعلی وہ آواز لگی تھی

سینے میں ایک آگ تھی ایسے بھڑک اٹھی

صحراء میں تھا میں جیسے اور پیاس لگی تھی

اختیار اپنے دل پہ اس وقت سے نہیں

جب اس کی آنکھ سے میری آنکھ لڑی تھی

جاگ اے طلحہ وہ وقت اب پھر نہ آئے گا

قسمت میں اک بار ہی آنی وہ گھڑی تھی

(طلحہ احمد )

 

Please follow and like us:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *